مولانا مارچ میں توسیع، پولیس کی مشکلات میں اضافہ

اسلام آباد: وفاقی دارالحکومت میں کئی دنوں سے جاری اپوزیشن جماعتوں کے آزادی مارچ نے پولیس کی مشکلات میں اضافہ کردیا، بجٹ ختم ہونے کے قریب آگیا۔

تفصیلات کے مطابق مولانامارچ میں توسیع کے باعث حکومت کی جانب سے بجٹ کی مد میں دیے گئے 7کروڑ روپے ختم ہونے کے قریب ہے، پولیس نے 25کروڑ روپے کی ڈیمانڈ کی جس پر انہیں 7کروڑ ملے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ کوہسار کمپلیکس میں رہائش پذیر پولیس اہلکاروں کو بلڈنگ سے نکال دیا گیا ہے، اہلکاروں کی رہائش کا بھی مسئلہ پیدا ہوگیا، اہلکار سڑکوں پر بیٹھنے پر مجبور ہیں۔اس وقت اسلام آباد میں 23ہزار پولیس اہلکار ڈیوٹی انجام دے رہے ہیں، ذرائع نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ اگر انہیں بجٹ کی مدد میں مزید رقم نہیں ملتی تو معاملات دشواریوں کی طرف جاسکتے ہیں۔خیال رہے کہ جمعیت علمائے اسلام ف اب تک فیصلہ نہیں کرسکی کہ انہیں اپنا یہ احتجاجی مارچ کب ختم کرنا ہے۔ گذشتہ روز جے یو آئی (ف) مجلس شوریٰ کے اجلاس میں مولانا فضل الرحمان کو کہا گیا کہ دھرنا ختم کرنے یا احتجاجی تحریک کے حوالے سے اپوزیشن جماعتوں کو اعتماد میں لیا جائے۔جے یو آئی ف ذرائع کا کہنا ہے کہ مجلس شوریٰ نے فیصلوں کا اختیار مولانا فضل الرحمان کو دیا ہے، اجلاس میں رہبر کمیٹی کے فیصلوں پر تحفظات کا اظہار کیا گیا، اجلاس میں اکرم درانی اور مولانا فضل الرحمان وضاحتیں پیش کرتے رہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں